Tuesday, January 6, 2015

Sectarianism in Pakistan?


The shocking confession of Ajit Kumar Doval, Advisor for Modi about indian involvement in Pakistan had not been digested that another Hindu Extremist Politician Subraminiam Sawami’s confession regarding diving Muslim into different Sects had been reported in which he is proudly telling the division of Muslims. In the way the sectarian issue had developed from a minor issue to major issue; the policies discussed by Sawami should be enough to open up the eyes of the Muslims. These minor differences are defaming Islam a religion of peace. Our minor differences has been developed and fueled to such an end that believers of ONE ALLAH and Prophet (SAWW) have been turned into enemies. Hundreds of thousands of innocent Muslims have lost their lives in this foreign sponsored sectarian war. If we have to ensure the safety of Pakistan and those living in Pakistan then we will have to understand and realize the anti-Pakistan, anti-Islam and anti-Muslim conspiracies otherwise we will become history…
  
Khalid Baig



ابھی نریندرہ مودی کے مشیر اجیت کمار دوول کا پاکستان میں ملوث ہونے کا حوالے سے اعتراف کا چرچا کم نہیں ہوا تھا کہ بھارت کے ایک اور انتہا پسند ہندو سیاستدان کا اعتراف سامنے آگیا ہے جس میں وہ انتہائی ڈھٹائی سے مسلمانوں کو فرقوں میں تقسیم کر نے کی پالیسی کو فخریہ انداز میں پیش کر رہا ہے۔ پاکستان میں جس طرح مذہبی حوالے سے فرقہ واریت نے سپولے سے اژدھے کی شکل اختیار کی ہے بھارتی لیڈر کی گفتگو سن کر ان لوگوں کی آنکھیں کھل جانی چاہئیں جو مذہبی رواداری اور امن کے امین دین اسلام کی بدنامی کا سبب بن رہے ہیں۔ اور باہمی فروعی اختلافات کو اس نہج پر لے آئے ہیں کہ ایک اللہ اور نبیؐ کے ماننے والے ایک دوسرے کے خون کے پیاسے بنا دئیے گئے ہیں۔ جس کی وجہ سے سینکڑوں بے گناہ مسلمان جان سے ہاتھ دھو چکے ہیں۔ ہمیں پاکستان کی اور پاکستان میں بسنے والوں کی سلامتی عزیز ہے تو بھارت کی پاکستان، اسلام اور مسلمانوں کے خلاف بنائی گئی پالیسیوں و سازشوں کو سمجھنا ہوگا ورنہ ہمارا نام بس داستانوں تک محدود ہو کہ رہ جائے گا۔۔۔