Monday, January 19, 2015

Dual Standards of Europe Regarding Religious Extremism… مذہبی انتہا پسندی کے حوالے سے یورپ کا دوہرا معیار


                Attacks on Charlie Hebdo Magazine which earned fame by publishing blasphemous cartoons of Hazrat Muhammad ()  and murder of the cartoonist, editor of the magazine and other employees of the magazine  was condemned by the Muslim countries because Islam does not allow any person to take the law into hands on individual basis. Moreover such an act of killings was also against the teachings of the Islam; but anti-Islam rallies and remarks given by some elected representatives of few Western countries forecast that what type of challenges and difficulties Muslims will have to face in the West as a minority. The attacks on Charlie Hebdo Magazine was given coverage by Western Media for a week, although the attacks over Mosques in France, Germany and other so called Civilized European Countries had started from the second of the attacks but Civilized and Free Western Media avoided to report such attacks.
                However, after 11 January 2015, rally taken out to express solidarity with the victims of Charlie Heddo Magazine attack, when the anti-Islam sentiments got fierce and people started talking openly against Islam, rally in Germany was taken out against Islam then CNN and DW started reporting the incidents of attacks over mosques in Europe. The painful aspect of this situation is that keeping in view the anti-Islam sentiments and appreciation by Public, Charlie Hebdo Magazine furthered its enmity towards Islam; at the time when I was writing these lines more than 3 million copies of the blasphemous magazine had been sent to the market while 2 million copies had been ordered for printing. Magazine had proudly announced to publish blasphemous cartoons once which will of course result in the protests in the Islamic world but what about those Muslim rulers who visited Paris in order to express solidarity with Charlie Hebdo and participate in the state rally held on 11 January 2015. There these Muslim rulers chanted slogans along with participants of the rally,  "JE SUIS CHARLIE" “Yes, I am Charlie Hebdo”.

                At this time Western Media should have highlighted those series of acts about which Turkey had pointed out that Europe should control its “Islamophobia” in a reaction towards attacks over the magazine but Civilized Western Media telecasted the attacks as Islam VS Europe. Turkey had rightly said that she is against all types of terrorism but Europe will have to control its rising anti-Islam mindset and racism. Because from the last few years not only the covering of head with scarf by Muslim women is being insulted but government is encouraging it.
                Europe is teaching Muslims to tolerate blasphemous cartoons (which can be more properly termed as Published Terrorism of West) in the name of freedom of expression but so called civilized West is not ready to accept and respect the sentiments of the 1/3rd population of the world i.e. Muslims half of which are living in the Sub-Continent. Nexus between RSS and BJP in India is threatening Muslims of India either to leave Islam or India claiming Hindu Extremism as real Identity of the Hindu India and also leaving no stone unturned to prove Pakistan as a terrorists state in which she is fully supported by Terrorist Western Media as they do not let go any chance to blame Pakistan for acts of terrorism all over the world.
                When people would protest against the blasphemous activities of blasphemous magazine in Pakistan the so-called moderates will not hesitate to term these protests as extremism.  Should Pakistan’s remain silent over the blasphemous activities of the West due to the fear of anti-Islam and anti-Pakistan policies of India and hypocrite behavior of West? Protest against the increasing terrorism (blasphemous activities) of the French Magazine and France are our duty.
                US Foreign Minister after return from his Bharat Yatra (visit to India) wants actions against all these religious organizations including Lashakar-e-Taiba (LeT) from which only India have complaints while India had no solid evidence against these religious organizations for being involved in RAW’s own terror attacks within India while USA and India both are pressurizing Pakistan of the basis of their propaganda machinery. In contrast to this despite of the unprovoked firing over Pakistani border areas and solid evidence of involvement of India in terrorism in Pakistan via Afghanistan; USA is not ready to stop its toddy i.e. India. Actually this is the hypocrite and dual standard behavior of the Jewish and Christian West that had made the lives of Muslim countries miserable and hard.

                The killing of Charlie Hebdo crew in terrorist attacks will bring what type of hardships for Muslims in the future this would be disclosed by the time but till then just like 9/11 drama; many bitter realities and “INNER JOBS” would be disclosed as well. Until now many questions has been raised as ISIS (داعش) claims the responsibility for the French attack while Al-Qaida from Yemen wants to get the credit while USA says that (her) Al-Qaida has no link with this attack. US media is also reporting that terrorists killed in this attack were since long in contact with French Intelligence Agencies. Moreover, in the way the whole action was captured from Cameras in different windows of the buildings shows as filmmakers were given their places in advance. The raising of Slogan “Allah o Akbar” by a terrorist on a deserted road, leaving behind identity by a terrorist trough which Police reached to the Sharif Kochi and Syed Kochi, the presence of terrorists around the targeted building of the magazine for 15 minutes but police did not target and kill them all these questions raise suspicions. The wonderful theory of a women namely Hayat’s involvement in the attack, then freeing her under the cover of hostages and then theory of her fleeing away to Syria via Turkey. What were the reservations behind showing the dead bodies of the killed terrorists? Why Western Media only showed the mourning for Jews only while a Muslim was killed as well in the attack? Why terrorists were wearing the masks when they were aware that they will find no place to hide in France; why did not they planned their evacuation? French Parliament’s vote in favor of Palestine, New York Time’s reporting it as, “Symbolic Vote in France Backs Palestinian State”, French leader’s visit to Russia and demanding USA to end sanctions over Russia due to Ukraine dispute. No one mentioning the cartoonist who made a cartoon saying "No attacks yet in France. Wait we have until the end of January to send you a new year wishes” in an edition of Charlie Hebdo raises many questions… But do not bother to waste your time for all these bitter realities because ‘BLAME FOR EXTREMISM IS ON PAKISTAN’!!!

Written by Khalid Baig,
Date: 18 January 2015


مذہبی انتہا پسندی کے حوالے سے یورپ کا دوہرا معیار
خالد بیگ

پیرس میں رسول اکرمؐ کی شان میں گستاخانہ خاکوں کی بار بار اشاعت سے شہرت پانے والے جریدے ’’چارلی ہیبڈو‘‘ پر حملے اور اس کے نتیجے میں ہفت روزہ کے ایڈیٹر‘ کارٹونسٹ اور ادارتی عملہ سمیت مارے جانے والے درجن بھر افراد کے قتل کی تمام اسلامی ممالک میں اس بنا پر مذمت کی گئی کہ اسلام کسی گروہ یا فرد واحد کو قانون ہاتھ میں لینے کی اجازت نہیں دیتا اور یہ عمل تو ویسے ہی اسلام کی تعلیم و روح کے منافی ہے لیکن اس وقوعے کے بعد یورپ میں اسلام مخالف ریلیوں اور اسلام کے بارے میں وسطی و مغربی یورپ کے بعض ممالک کی پارلیمنٹ کے منتخب عوامی نمائندگان کی طرف سے ٹیلی ویژن چینلوں پر دئے جانے والے ریمارکس نہ صرف حیران کن ہیں بلکہ نشاندہی کرتے ہیں کہ آنے والے دنوں میں ان ممالک میں آباد مسلمان اقلیت کو کس طرح کے مسائل و مشکلات درپیش ہونگے۔ چارلی ہیبڈو پر حملہ مسلسل ایک ہفتہ تک مغربی میڈیا پر چھایا رہا۔ گو حملے کے دوسرے وز سے ہی فرانس‘ جرمنی و دیگر یورپی ممالک میں مساجد پر حملے شروع ہو گئے تھے لیکن مغربی الیکٹرانک میڈیا نے اس طرح کی خبروں کو نشر کرنے سے اجتناب کیا۔ تاہم گیارہ جنوری کو ہفت روزہ اور حملے کا شکار ہونے والوں سے اظہار یکجہتی کے لئے حکومتی سطح پر پیرس میں نکالی گئی ریلی کے بعد جب مغربی ممالک میں اسلام مخالف جذبات میں مزید شدت آئی اور لوگ کھل کر اسلام کے خلاف بولنے لگے‘ جرمنی میں اسلام کے خلاف ریلی نکلی اور ریلی کے شرکا نے اسلام مخالف جذبات کا اظہار کیا تو مساجد پر حملوں کی خبریں بھی بی بی سی‘ ڈی ڈبلیو اور سی این این پر نشر ہونے لگیں۔ تاہم اس ساری صورتحال کا انتہائی تکلیف دہ پہلو یہ ہے کہ عالمی سطح پر حملہ آوروں کی مذہب اور اپنے لئے پذیرائی دیکھتے ہوئے ’’چارلی ہیبڈو‘‘ نے اپنی اسلام دشمنی قائم رکھی اور آج جب میں یہ تحریر لکھ رہا ہوں جریدے کی 30 لاکھ کاپیاں فروخت کے لئے بازار میں بھیجی جا چکی ہیں اور مزید 20 لاکھ کی چھپائی جاری ہے۔ جریدے نے توہین آمیز خاکے پھر سے شائع کرنے کا فخریہ انداز سے اعلان کیا ہے جس کے خلاف یقیناً پوری اسلامی دنیا سراپا احتجاج ہوگی لیکن ان مسلمان سربراہان مملکت و دیگر مسلمانوں کا کیا ہو گا جو ’’چارلی ہیبڈو‘‘ سے اظہار یکجہتی اور دہشت گردی کی مذمت کے لئے گیارہ جنوری کو سرکاری ریلی میں شرکت کے لئے پیرس پہنچے۔ وہاں انہوں نے ریلی کے شرکاء کے ساتھ یک زبان ہو کر نعرے لگائے کہ ’’ہاں میں چارلی ہوں‘‘؟ حالانکہ ضرورت اس بات کی تھی کہ مغربی میڈیا فرانسیسی جریدے پر حملے کو اسلام بمقابلہ یورپ کے تناظر میں دیکھنے کی بجائے ان عوامل کو موضوع بناتا جس کے بارے میں 7 جنوری کو وقوعے پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے ترکی نے واقع کی نشاندہی کی تھی کہ یورپ ’’اسلامو فوبیا‘‘ پر قابو پائے‘‘ ترکی نے درست کہا کہ وہ ہر طرح کی دہشت گردی کا مخالف ہے مگر یورپ کو بھی بڑھتے ہوئے اسلامو فوبیا اور نسل پرستی پر قابو پانا چاہئے‘ کیونکہ گزشتہ چند برسوں سے فرانس میں مسلمان خواتین کے لئے سر ڈھانپنے کو نہ صرف تضحیک کا نشانہ بنایا جا رہا ہے بلکہ حکومت کی طرف سے اس کی حوصلہ افزائی بھی کی جا رہی ہے۔ 
توہین آمیز خاکوں (جنہیں اشاعتی دہشت گردی کہا جائے تو زیادہ بہتر ہو گا) کو یورپ آزادی اظہار کا نام دے کر مسلمانوں کو رواداری اور درگزر کا درس تو دے رہا ہے لیکن آزادی اظہار اور انسانی حقوق کا علمبردار یورپ دنیا کی ایک تہائی سے زیادہ مسلمان آبادی کے مذہبی جذبات کا احترام کرنے کو تیار نہیں جس کا نصف برصغیر میں آباد ہے۔ بھارت جہاں راشٹریہ سیوک سنگھ اور بی جے پی کا اتحاد ایک طرف ہندو انتہا پسندی کو بھارت کی حقیقی شناخت قرار دیتے ہوئے مسلمانوں کو جبری طور پر اسلام چھوڑنے یا بھارت چھوڑنے کی دھمکیاں دے رہا ہے تو ساتھ ہی اس کی بھرپور کوشش ہے کہ وہ دنیا کے سامنے پاکستان کو دہشت گرد ملک ثابت کرے ‘ بھارتی منصوبے کو مغربی میڈیا کی بھرپور مدد و معاونت بھی حاصل ہے جو دنیا میں کہیں بھی دہشت گردی کی واردات ہو جائے پاکستان کا ذکر کرنے سے نہیں چوکتے۔ اب جب ’’چارلی ہیبڈو‘‘ کی حالیہ جسارت کا پاکستان میں عوامی سطح پر ردعمل ہو گا تو آزادی اظہار کے نام لیوا پاکستان میں احتجاج کو انتہا پسندی قرار دینے میں دیر نہیں لگائینگے۔ تو کیا بھارتی اسلام و پاکستان دشمنی اور مغربی منافقانہ طرزعمل کے خوف سے پاکستانیوں کو چارلی ہیبڈو کی طرف سے حضرت نبی کریم ﷺ کی شان میں گستاخی پر خاموش رہنا چاہئے؟ ہرگز نہیں۔ پاکستان میں ہر سطح پر فرانسیسی جریدے کے خلاف احتجاج ہم سب پر فرض ہے۔ بھارت سے واپسی پر پاکستان کا دورہ کرنے والے امریکی وزیر خارجہ کو لشکر طیبہ سمیت ان تمام مذہبی جماعتوں کے خلاف بلا امتیاز کارروائی درکار ہے جن سے اب صرف بھارت کو شکایت ہے حالانکہ بھارت کے پاس ان جماعتوں کے خلاف بھارت میں کسی بھی کارروائی میں ملوث ہونے کا ایک بھی ثبوت نہیں لیکن محظ پاکستان مخالف پروپیگنڈے کی بنا پر بھارت و امریکہ اپنا دباؤ قائم کئے ہوئے ہیں۔ اس کے برعکس بھارتی فوج کی لائن آف کنٹرول اور ورکنگ باؤنڈری پر نہ تھمنے والی بلااشتعال فائرنگ علاوہ ازیں براستہ افغانستان بھارت کے پاکستان میں دہشت گردی کی کارروائیوں کے تمام تر ثبوتوں کے باوجود امریکہ بھارت کو لگام دینے کو تیار نہیں‘ دراصل یہی مغربی منافقانہ طرزعمل سے جس نے کئی عشروں سے مسلمان ممالک کے لئے جینا حرام بنا رکھا ہے۔ 

پیرس میں دہشت گردوں کے ہاتھوں 17 افراد کا مارے جانا آگے چل کر ’’نائن الیون‘‘ کی طرح مسلمانوں کے لئے نہ جانے کس طرح کی مشکلات لائے گا یہ تو آنے والا وقت بتائے گا۔ تب تک یقیناً چارلی ہیبڈو پر ہونے والے حملے کے اصل رموز بھی منظر عام پر آ چکے ہونگے جس کے بارے میں بہت سے سوال حل طلب ہیں کہ داعش والے اسے اپنا کارنامہ قرار دے رہے ہیں تو یمن سے القاعدہ اپنا‘ جبکہ امریکہ کا کہنا ہے کہ اس کارروائی سے القاعدہ کا کوئی تعلق نہیں۔ ساتھ ہی امریکی میڈیا خبر دے رہا ہے کہ حملے میں ملوث اشرف و سید برادران طویل عرسے سے فرانسیسی خفیہ اداروں سے رابطے میں تھے۔ پھر جس انداز سے اردگرد کی عمارتوں کی مختلف کھڑکیوں سے حملہ آوروں کی کارروائی کو عکس بند کیا گیا کہ جیسے فلم بنانے والے پہلے سے تیار تھے۔ ایک حملہ آور کا ویران سڑک پر ’’اﷲ اکبر‘‘ کا نعرہ لگانا ‘ فرار ہوتے ہوئے ایک دہشت گرد کا موقع پر اپنی شناخت چھوڑ کر جانا جس کے ذریعے پولیس کو شریف کوچی اور سید کوچی تک پہنچنے میں مدد ملی۔ پھر یہ سوال بھی بڑا اہم ہے کہ دہشت گرد 15 منٹ تک چارلی ہیبڈو کی عمارت اور اس کے باہر موجود رہے تو پیرس کی پولیس نے وہیں ان کا کام تمام کیوں نہیں کیا۔ حیات نامی خاتون کو پہلے حملے میں ملوث بعد ازاں یرغمالیوں کی رہائی کی آڑ میں فرار اور پھر اس کے حملے کی کارروائی سے ایک ہفتہ قبل براستہ ترکی ‘ شام پہنچنے کی حیران کن تھیوری۔ کوچی برادران کی مارے جانے کے بعد لاشیں منظر عام پر لانے اور دنیا کو دکھانے میں کیا قباحت تھی۔ حملے میں ایک مسلمان بھی مارا گیا لیکن عالمی میڈیا پر یہودیوں کا ہی سوگ کیوں چھایا رہا۔ حملہ آوروں کو نقاب پہن کر کارروائی کی ضرورت کیوں پیش آئی جبکہ وہ جانتے تھے کہ فرانس میں انہیں کہیں پناہ نہیں ملے گی‘ حملہ آوروں نے کارروائی کے بعد محفوظ پناہ گاہ تک پہنچنے کا بندوبست اپنے منصوبے میں شامل کیوں نہیں کیا۔ 2 دسمبر کو فرانسیسی پارلیمنٹ کا فلسطین کی ریاست کو تسلیم کرنے کے حق میں ووٹ دینا’’نیویارک ٹائمز‘‘ کا اسے مذکورہ سرخی Symbolic vote in France backs Palestinian state کے ساتھ شائع کرنا۔ فرانسیسی سربراہ کا روس جانا اور وہاں پہنچ کر یوکرائن کے مسئلہ پر امریکہ کی طرف سے روس پر لگائی گئی پابندیوں کے خاتمہ کا مطالبہ کرنا پھر چارلی ہیبڈو کی حملہ سے کچھ عرصہ پہلے کی اشاعت میں یہ طنزیہ پیغام
 "No attacks yet in France". Wait' we have until the end of January to send you a new year wishes

کارٹون کی شکل میں شائع کرنے والے کارٹونسٹ کا کہیں بھی ذکر نہ آنا بہت سے شکوک کو جنم دیتا ہے۔ لیکن انتہا پسندی کا الزام پاکستان پر ہے۔

Written by Khalid Baig,
Date: 18 January 2015